ہے نور ِعبادت سے چہرہ ضوبار ہمارے راجہ کا
اور عشق کے تیروں سے چھلنی دل افگار ہمارے راجہ کا
ہر سمت سے میکش آ آکر عرفان کے ساغر پیتے ہیں
توحید کا بادہ خانہ ہے دربار ہمارے راجہ کا
اخلاص و وفا کے ہیروں سے بھرپور ہیں اسکی دکانیں
ہے شہر ِ تصوف کی زینت بازار ہمارے راجہ کا
ارباب ِوفا کے ہونٹوں پر ہیں تزکرے انکی عظمت کے
ہر خضر ِ طریقت کرتا ہے پرچار ہمارے راجہ کا
ہر کنج میں نخل ِتازہ ہیں ایمان و سکوں و الفت کے
اک خلدِبریں ہے دنیا میں گلزار ہمارے راجہ کا
وہ حسن کے جلووں میں ڈوبا ابھرا تو مجسم حسن تھا وہ
اک بار کیا جس نے آکر دیدار ہمارے راجہ کا
مشرق سے لے کر مغرب تک ہیں چرچے انکی سیرت کے
بے مثل ہے سارے عالم کردار ہمارے راجہ کا
ہم لوگ کسی بھی حالت میں محکوم نہیں ہیں غیروں کے
ہے راج ہماری دنیا میں اے زار ہمارے ر۱جہ کا

Advertisements